افکار عالم

افغانستان میں بین الاقوامی میڈیا کی نشریات پر پابندی لگانے طالبان حکومت کا فیصلہ

افغانستان میں طالبان کی حکومت نے مقامی میڈیا کے ذریعے نشر ہونے والے بین الاقوامی میڈیا اداروں پر پابندی لگانے کا فیصلہ کیا ہے۔  خامہ پریس نے رپورٹ کیا کہ افغانستان میں بی بی سی اتوار کی رات نشریات بند کرنے والا پہلا ملک بن گیا۔ ایک بیان میں، بی بی سی نے طالبان سے اپنا فیصلہ واپس لینے کی اپیل کی ہے اور کہا کہ اس سے فارسی، پشتو اور ازبک زبان کے پروگراموں کے 60 لاکھ سے زیادہ ناظرین متاثر ہوں گے۔ بی بی سی فارسی ٹی وی چینل اب بھی قابل رسائی ہے، لیکن صرف 20 فیصد افغانوں کے پاس سیٹلائٹ ٹی وی ہے۔ خامہ پریس کے مطابق "طالبان کی جانب سے ہمارے ٹی وی پارٹنرز کو بین الاقوامی نشریاتی اداروں کو ان کی نشریات سے ہٹانے کا حکم دینے کے بعد افغانستان میں پشتو، فارسی اور ازبک میں بی بی سی کے ٹی وی نیوز بلیٹن بند کر دیے گئے ہیں۔”
بی بی سی کے علاوہ طالبان نے وائس آف امریکہ، جرمن ڈوئچے ویلے (ڈی ڈبلیو) اور چائنا گلوبل ٹیلی ویژن نیٹ ورک کی مزید نشریات پر بھی پابندی لگا دی ہے۔ ذرائع کے مطابق، گزشتہ سال اگست میں جب سے طالبان نے افغانستان پر کنٹرول حاصل کیا، ملک کے 40 فیصد میڈیا آؤٹ لیٹس، جبکہ ایک اندازے کے مطابق 6,400 صحافی اس وقت بے روزگار ہیں۔ کابل کے سقوط کے بعد سے 80 فیصد سے زیادہ افغان خواتین صحافی اپنی ملازمتوں سے ہاتھ دھو بیٹھی ہیں۔2021 کے ورلڈ پریس فریڈم انڈیکس میں افغانستان 122 ویں نمبر پر ہے۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
×