احوال وطن

مولانا خلیل الرحمن سجاد نعمانی کی سماج وادی کے صدر اکھلیش یادو سے ملاقات

نئی دہلی: 11؍اگست (عصرحاضر/ملت ٹائمز) سماج وادی پارٹی کے صدر اور اتر پردیش کے سابق وزیر اعلی اکھلیش یادو سے گذشتہ کل معروف عالم دین مولانا خلیل الرحمن سجادنعمانی کی دہلی میں ملاقات ہوئی ۔ ملت ٹائمز سے بات کرتے ہوئے مولانا خلیل الرحمن سجاد نعمانی نے کہاکہ تقریبا ایک گھنٹہ تک ملاقا ت ہوئی جس میں اتر پردیش کے انتخابات کے تعلق سے ہماری بات چیت ہوئی ۔ مولانا نعمانی نے بتایاکہ ہم نے اکھلیش یادو کو دو ٹوک انداز میں کہاکہ اس وقت ملک میں بنیادی لڑائی فاشزم اور سیکولرزم کے درمیان ہے ، ہندتوا کے نام پر پورے ملک کے آئینی اور دستور ی نظام کو منہدم کرنے کی پوری پلاننگ ہے، ملک کے دلتوں ، مسلمانوں اور آدی واسیوں سے بنیادی حقوق سلب کرنے کی آر ایس ایس کی منصوبہ بندی ہے، اتر پردیش سنگھ پریوار کا سب سے بڑا گڑھ بنتا جارہاہے اور فرقہ پرست پارٹیاں پوری قوت کے ساتھ میدان میں سرگرم ہیں۔ عوام پر سرمایہ دارانہ نظام تھوپ دیا گیاہے۔ اتر پردیش کی یہ صورت حال ہے جس کے خلاف آپ کو پوری قوت اور حوصلہ کے ساتھ لڑائی لڑنی ہوگی ، فاشزم،سرمایہ دارانہ نظام اور ملک کی یکجہتی کو برباد کرنے والی طاقتوں سے آپ کا مقابلہ ہے ۔ اس لئے آپ کو پوری قوت کے ساتھ میدان میں آناپڑے گا ، فرقہ پرستی ، فاشزم، سرمایہ دارانہ نظام اور دستور پر حملہ آور طاقتوں کے خلاف کھل کر مقابلہ کرنا ہوگااور اسی راستہ پر چلکر ہی کامیابی مل سکتی ہے ، نرمی کا راستہ اختیار کرکے آپ ملک کی فرقہ پرست طاقتوں کو شکست نہیں دے سکتے ہیں ۔ سماج وادی پارٹی سوشلزم کے اصولوں کی علمبردار رہی ہے ، سماجی مسائل کا حل کرنا سماج وادی لوگوں کا بنیادی مشن رہاہے اور اس وقت براہ راست آپ کی لڑائی فرقہ پرست پارٹیوں سے ہے اس لئے ضروری ہے کہ سماج وادی کے لوگ کھل کر میدان میں آئیں ، سب کو ساتھ لیکر چلیں اور پوری ہمت کے ساتھ مقابلہ کریں اور سرمایہ دارانہ نظام کے خلاف زور دار تحریک چلائیں ۔
مولانا نعمانی نے مزید بتایاکہ ہم نے اکھلیش یادو سے کہاکہ آپ کو مزید ہمت ، جذبہ اور جنون سے کام لینے کی ضرورت پڑے گی ، ملک کے سبھی طبقات کو ساتھ لیکرچلنا ہوگا ، دلتوں ، مسلمانوں ، آدی واسیوں ، ایس ایس ، ایس ٹی اور تمام کمزور طبقات کے لوگوںسے رابطے بڑھانے ہوں گے، کسانوںکے مسائل پر توجہ دینی ہوگی اور یہ صاف مسیج دینا کہ ہم فرقہ پرستی کے خلاف ہیں ۔ ہماری لڑائی ان طاقتوں کے خلاف جو ملک میں فاشزم اور کیپٹلزم کو لانا چاہتے ہیں ،مذہب کے نام پر ملک کا ماحول خراب کررہے ہیں، سیکولرزم کو ختم کرکے ہندتوا راشٹر کو لانا چاہتے ہیں ۔ مولانا نعمانی نے ایک سوال کے جواب میں بتایا کہ اکھلیش یادو سے تقریبا اسی طرح کے چار پانچ امور پر بات چیت ہوئی اور انہوں نے سبھی سے اتفاق کیا اور کہاکہ یقین کیجئے ہم پوری قوت کے ساتھ فرقہ پرستی ، سنگھ کی سوچ اور نفرت کے خلاف مضبوطی کے ساتھ لڑیں گے، آر ایس ایس سے ہمارا کوئی سمجھوتہ نہیں ہوسکتاہے اور مجھے آپ کی باتوں سے اتفاق ہے کہ اسی راستہ پر چل کر ہی کامیابی مل سکتی ہے ۔اکھلیش یادو نے یہ بھی کہاکہ الیکشن میں ہم سبھی کو ساتھ لیکر چلنا چاہتے ہیں ، سبھی ذات،طبقہ کے لوگوں سے ملاقات جاری ہے ، نوجوان، مردوں ،عورتوں اور یوپی کے تمام شہریوں میں بی جے پی سرکار کے خلاف بے چینی ہے ، اضطراب ہے اور اگلی مرتبہ کسی بھی حال میں بی جے پی کی سرکار نہیں بن سکتی ہے ۔ آپ جیسے دانشور اور بزرگوں سے ہم صلاح مشورہ لیتے رہیں گے ۔ سیکولزم ، جمہوریت ، سوشلزم ،آئین کی بالادستی،سرمایہ دارانہ نظام کا خاتمہ اور فرقہ پرستوں طاقتوں کو اقتدار سے دور رکھنے کیلئے ہم ہر طرح کی قربانی دینے کیلئے تیار ہیں ۔
واضح رہے کہ مولانا خلیل الرحمن سجاد نعمانی بھارت کے مشہور عالم دین ہیں اور عوام کے درمیان بیحد مقبول ہیں ، متعدد ملی تنظیموں اور جماعتوں سے آپ کی وابستگی ہے ، عام مسلمانوں سے آپ کے گہرے رابطے ہیں ، اس کے علاوہ اوبی سی ، ایس سی او رایس ٹی کمیونٹی میں بھی آپ کی مضبوط گرفت ہے ۔ اکھلیش یادو کے ساتھ مولانا سجاد نعمانی کی یہ ملاقات دہلی میں واقع اکھلیش یادو کی سرکاری رہائش گاہ پر ہوئی ۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
×