آئینۂ دکن

دھرم سنسد میں مسلمانوں کی نسل کشی کا مطالبہ کرنے والوں کے خلاف ایف آئی آر کافی نہیں گرفتار کیا جائے: بیرسٹر اویسی

حیدرآباد: 27؍دسمبر (عصرحاضر) اے آئی ایم آئی ایم کے صدر بیرسٹر اسد الدین اویسی نے پیر کو کہا کہ ہریدوار میں منعقدہ دھرم سنسد میں مسلمانوں کی نسل کشی کا مطالبہ کرنے والوں کے خلاف محض ایف آئی آر سے کوئی فائدہ نہیں ہوگا اور اس لیے انہیں فوری گرفتار کیا جائے۔

حیدرآباد کے رکن پارلیمنٹ نے یہاں نامہ نگاروں سے کہا کہ جن تنظیموں نے یہ کال دی ہے ان پر غیر قانونی سرگرمیوں کی روک تھام ایکٹ (UAPA) کے تحت پابندی عائد کی جانی چاہئے۔

ہریدوار پولیس نے ہفتہ کے روز مبینہ نفرت انگیز تقاریر کے سلسلے میں فرسٹ انفارمیشن رپورٹ (ایف آئی آر) میں مزید دو افراد کو نامزد کیا ہے۔

پولیس نے پہلے وسیم رضوی عرف جتیندر تیاگی اور دیگر کے خلاف دفعہ 153A تعزیرات ہند کے تحت مقدمہ درج کیا تھا۔

اویسی نے کہا کہ اس معاملے پر سماج وادی پارٹی اور کانگریس کی خاموشی نے انہیں بے نقاب کردیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دونوں پارٹیوں کو خدشہ ہے کہ انہیں آئندہ انتخابات میں ‘دوسرا ووٹ’ نہیں ملے گا۔ "انہوں نے (ہریدوار میٹنگ میں مقررین) نے یہاں تک کہ منموہن سنگھ کو قتل کرنے کا مطالبہ کیا، جو اس ملک کے سابق وزیر اعظم ہیں۔انہوں نے کانگریس کے لیڈروں سے پوچھا کہ آپ کب ردعمل ظاہر کریں گے،‘‘۔

آل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین (اے آئی ایم آئی ایم) کے صدر نے کہا کہ آئین اور قانون کی حکمرانی پر یقین رکھنے والی تمام سیاسی جماعتوں کو اپنی خاموشی توڑنی ہوگی کیونکہ دھرم سنسد نے مسلمانوں کی نسل کشی کی کھلی کال دی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ میانمار میں روہنگیائیوں کو مارا گیا اور بے گھر کیا گیا، ہندوستان میں مسلمانوں کے ساتھ ایسا ہی سلوک ہونا چاہیے۔

اویسی نے الزام لگایا کہ اتراکھنڈ میں بی جے پی حکومت کی آشیرواد اور مکمل حمایت سے دھرم سنسد منعقد ہوئی اور وہاں ایسی باتیں کہی گئیں۔

انہوں نے یہ بھی ٹویٹ کیا کہ رائے پور میں دھرم سنسد بھی چھتیس گڑھ میں کانگریس حکومت کی حمایت کے بغیر ممکن نہیں تھا۔ انہوں نے نشاندہی کی کہ رامسندر داس، جو چھتیس گڑھ گاؤ سیوا کمیشن کے چیئرمین ہیں اور کابینہ کا درجہ رکھتے ہیں، دھرم سنسد کے چیف سرپرست تھے۔

ان خبروں پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہ رامسندر داس اسٹیج سے چلے گئے جب سنت کالی چرن مہاراج مہاتما گاندھی کو گالی دے رہے تھے۔

انہوں نے کالی چرن کے اس ریمارکس کا حوالہ دیا کہ ایم پی، ایم ایل اے، وزیر اور وزیر اعظم کو کٹر ہدوتوادی ہونا چاہئے، کہ اگر لوگ ووٹ نہیں ڈالیں گے تو اسلام ملک پر غالب آجائے گا اور اس ریمارکس کا حوالہ دیا کہ لوگوں کو زیادہ سے زیادہ تعداد میں ووٹ دینا چاہئے تاکہ کوئی ایسا اصول منتخب کیا جائے جو کٹر ہندوتوادی، چاہے وہ کسی بھی سیاسی پارٹی سے آئے۔

اویسی نے یہ بھی لکھا کہ کیا رام سندر کو یہ بیان قابل اعتراض نہیں لگا؟ کیا یہ بیان قابل مذمت نہیں؟ جب کالی چرن یہ تقریر کر رہے تھے تو کانگریس لیڈر پرمود دوبے، بی جے پی لیڈر سچیدانند اپاسانے اور نند کمار سائی بھی سامعین میں موجود تھے۔ کسی نے بھی اس کی خاموشی نہیں توڑی،‘‘۔

اویسی نے کہا کہ ہندو راشٹرا، مسلمانوں کا قتل عام، لو جہاد کی باتیں کانگریس کے کابینہ وزیر کے عہدے کے لیڈر کی سرپرستی میں ہوئیں۔ ایف آئی آر گاندھی جی کے بیان پر درج کی گئی ہے۔ کیا اس کا مطلب یہ ہے کہ ہمارے قتل عام کی بات تشویش کا باعث نہیں ہے،‘‘۔

اے آئی ایم آئی ایم لیڈر نے چھتیس گڑھ کے وزیر اعلی بھوپیش بگھیل پر بھی تنقید کی۔ "بگھیل جی اتر پردیش میں دھرنا دے سکتے ہیں، لیکن مذہب کے نام پر ان کی اپنی ریاست میں کیا ہو رہا ہے؟ ہر کوئی اس دوڑ میں ہے کہ سب سے بڑا ہندو کون ہے،‘‘۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
×